عورت کی مکاری

ایک دفعہ جمعہ کے دن مولوی صاحب بیان فرمارہے تھے کہ عورت کے ایک ایک بال کے نیچے بیس بیس مکاریاں چھپی ہوتی ہیں اوروہاں پرایک دیہاتی کسان بیٹھامولوی صاحب کی باتیں سن رہاتھااوروہ جیسے ہی گھرآیااس نے اپنی بیوی کوسرسے گنجاکردیاحالانکہ اس کی بیوی کوئی اوپٹ پٹانگ فرمائشیں بھی نہیں کرتی تھی .ایک نیک اورفرشتہ صفت خاتون تھی۔ بیوی کوبہت دکھ ہوااورشوہرسے پوچھاآپ نے ایساکیوں کیاہے توشوہربولاکہ ہماری مسجدکے مولوی نےبتایاکہ عورت کے ایک ایک بال کے نیچے بیس بیس مکاریاں چھپی ہوتی ہیں۔

اورمیں نے سوچاکہ تمہاری مکاریاں ختم کردیتاہوں عورت بہت مایوس ہوئی اوراپنے دل میں سوچاکہ اس بے وقوف کواصل مکاری اب دکھانی پڑے گی .اورپھراس نے شوہرسے بدلہ لینے کی ٹھان لی۔ لہٰذاعورت اگلے دن بازارگئی اوربازارسے کچھ مچھلیاں خریدکراس نے اپنے کھیتوں میں چھپادیں اورایک چھوٹی سی مچھلی کودھاگا باندھ کراپنے گریبان میں چھپالیا اور پھروہ اپنے گھرواپس آگئی شوہرجب کھیتوں میں کام کرنے گیااوراس نے کھیتوں میں کام کرناشروع کیاتواسے جگہ جگہ سے مچھلیاں ملنا شروع ہوگئیںوہ کسان بہت خوش ہوااس نے مچھلیاں تھیلی میں ڈالیں اورگھرآکربیوی کودے دیں اورکہاکہ آج مچھلیاں پکائیں گے۔ بیوی نے کہاکہ مچھلیاں آج آپ کواس ٹائم کہاں سے مل گئیں توشوہرنے کہاکہ کھیتوں سے ملی ہیں بیوی نے وہ مچھلیاں لے کرکہیں چھپادیں اورگھرکے دوسرے کاموں میں مصروف ہوگئی شام کوجب شوہرگھرآیا تواس نے بیوی سے کہاکہ کھانا لے آئوبیوی نے کہاکہ گھرمیں کچھ پکانے کونہیں ہے کھاناکہاں سے لائوںشوہرنے غصے سے کہاکہ جومچھلیاں میں لایاتھاوہ کہاں ہیں بیوی بولی کونسی مچھلیاں کیسی مچھلیاں شوہرنے کہاکہ جومیں کھیتوں سے پکڑ کرلایا تھا بیوی بولی تمہارادماغ توخراب نہیں ہوگیا پھر بیوی نے اس کے بھائیوں کو پیغام بھیجا کہ جلدی آئومیراشوہر پاگل ہوگیا ہے جب اس کے بھائی آئے اورپوچھاکہ کیاہواہے تووہ عورت بو لی کہ کل سے عجیب عجیب حرکتیں کررہاہے پہلے تومیراسرگنجاکردیاخیریہ توکوئی بات نہیں میں سہہ لوں گی اب یہ کہہ رہاہے کہ مچھلی پکائومیں کہاں سے اسے مچھلیاں پکاکردوں اس کاشوہربیوی کومارنے کے لیے لپکاتواس کے بھائیوں نے اسے پکڑلیا شوہرنے کہاکہ یہ جھوٹ بول رہی ہے۔

بیوی نے کہاکہ اگرمیں جھوٹ بول رہی ہوں تواس سے یہ پوچھیں کہ مچھلیاں کہاں سے آئی ہیںوہ بولامیں اپنے کھیتوں سے پکڑ کرلایاتھا.بیوی کہنے لگی سن لواب کھیتوں میں مچھلیاں کہاں سے آئیںشو ہربیوی کومارنے کے لیے آگے بڑھاتواس کے بھائیوں نے اسے پکڑ کرکرسی سے باندھ دیا۔ پھربیوی نے چپکے سے گریبان سے مچھلی نکالی اوراس کودکھاکرجلدی سے گریبان میں چھپالی شوہرچیخ کربولاوہ دیکھومچھلی توبیوی بولی کہ دیکھواسے پاگل پن کادورہ پڑ رہاہے۔ وہ تھوڑی تھوڑی دیرکے بعدمچھلی مچھلی کرنے لگاجواس کی بیوی اس کودکھارہی تھی بھائیوں کویقین ہوگیاکہ یہ بالکل پاگل ہوگیاہے اوروہ ڈاکٹرکولینے چلے گئے .شوہراوربیوی گھرمیں اکیلے تھے توبیوی نے مسکراکرکہاکہ یہ ہوتی ہے مکاری جوبالوں سے نہیں دماغ سے ہوتی ہےاب بتائوپاگل خانے جاناہے یاپھرمعافی مانگنی ہے.شوہربے چارہ روتے ہوئے بولامیرے ماں با پ کی بھی توبہ جوعورت زات سے پنگالو ں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *